گرمیوں میں جِلد کی حفاظت کیسے کریں؟

گرمیوں میں جِلد کی حفاظت اور بھی ضروری ہے!

skin-care-for-this-spring.jpg

گھریلو اور روایتی طریقے آزمائیں

کہتے ہیںکہ جِلد انسان کا قدرتی لباس ہے اور یہ کسی شخص کو دور سے پہچاننے میں اہم کردار ادا کرتی ہے۔ جلد ہمارے جسم کا وہ حصہ ہے جو سب سے زیادہ دکھائی دیتا ہے چناں ثابت ہوا کہ اسے جسم کا خوب صورت ترین حصہ ہونا چاہیے، اگر آپ روز مرہ میں ذرا سی توجہ دیں تو آپ بھی بہترین جلد کی مالک بن سکتی ہیں۔ اس طرح آپ طرح طرح کی اسکن کیئر پروڈکٹ سے اپنا سنگھار دان بھرنے سے بھی نجات حاصل کر سکتی ہیں۔

face-care-tips-625_625x430_61442303868.jpg

بنیادی اسکن کیئر ہدایات

٭ جلد کو ہر ممکن صاف ستھرا رکھیں۔

٭ جلد کو مناسب نمی فراہم کرنے کے لیے روزانہ کم از کم آٹھ گلاس پانی ضرور پئیں۔

کبھی بھی اپنے چہرے کی جلد کو مت نوچیں اور تولیے سے صاف کرتے وقت رگڑنے سے بھی پرہیز کریں۔

٭ جلد کی اچھی صحت کے لیے دھوپ، اسٹیم یا گرم پانی سے غسل کرنا بھی مضر ہے لہٰذا ان سے بھی حتیٰ الامکان بچنے کی کوشش کریں۔

٭ نہانے کے بعد جلد خشک ہونے سے پہلے موئسچرائزنگ لوشن استعمال کریں۔

٭ دن کے وقت جلد کو کم موائسچرائز کریں جب کہ رات کو سوتے وقت زیادہ موئسچرائزنگ کریم استعمال کریں۔

٭ اگر آپ کی جلد حساس ہے تو بہتر یہی ہے کہ ان کاسمیٹکس پروڈکٹ کا استعمال کریں جو آپ کی جلد کی حساسیت کے عین مطابق ہیں، اس سلسلے میں آپ اپنے اسکن کیئر اسپیشلسٹ سے رجوع کریں۔

٭ایکسر سائز کرنا بھی آپ کی جلد کی صحت کے لیے نہایت مفید ہو سکتا ہے۔

٭اپنے ہاتھوں کو چہرے کی جلد سے دور رکھیں۔

٭ کبھی بھی اپنے چہرے پر ہونے والے کیل مہاسے کو ناخن سے نہ نوچیں، اس طرح مرض بڑھ جاتا ہے اور انفیکشن کا خطرہ بھی ہوتا ہے۔ اس سلسلے میں سب سے پہلا کام یہ کریں کہ اپنے اسپیشلسٹ سے رجوع کریں۔

٭ ہفتے میں ایک بار اپنے چہرے اور گردن کی جلد کا فیشل ضرور کریں۔

٭خشک موسم میں نہانے کے فوراً بعد اپنی کہنیوں، گھٹنوں اور پیروں کے پنجوں کی جلد موائسچرائزنگ کریں۔

٭ حساس جلد والے خواتین و حضرات اینٹی بیکٹیریل سوپ استعمال کریں۔

٭ کم خوابی آپ کی جلد پر اثر انداز ہو سکتی ہے لہٰذا ہمیشہ اپنی نیند پوری کریں۔

٭ اپنی اچھی اسکن کے لیے پھلوں اور دودھ کو اپنی خوراک میں ضرور شامل رکھیں۔

دھوپ سے بچیں

یہ بات کسی سے ڈھکی چھپی نہیں ہے کہ دھوپ آپ کی جلد اور بالوں کی سخت دشمن ہے۔ آیا آپ ایک خاتون ہیں یا مرد۔ 

images.jpg

اگر آپ بائیس سال یا چالیس سال کی عمر میں بھی خوب صورت نظر آنا چاہتے/ چاہتی ہیں تو آپ کو دھوپ سے بچنا ہو گا اور بے شک آپ عمر کے کسی بھی حصے میں ہیں، آج ہی سے اپنی اچھی جلد اور صحت مند بالوں کی خاطر تیز دھوپ سے بچنا شروع کر دیں، کیوں کہ یہ آپ کے حُسن کی سخت ترین دشمن ہے۔

٭ ہمیشہ SPF کے ساتھ فاؤنڈیشن استعمال کریں۔

٭ صبح دس بجے سے شام تین بجے تک تیز دھوپ میں نکلنے سے پرہیز کریں کیوں کہ اس وقت سورج اپنی پوری آب و تاب سے چمکتا ہے اور اس وقت دھوپ میں تیز ترین تمازت ہوتی ہے۔ سن اسکرین کا استعمال کریں۔

summer-tips1.jpg

٭ یہ تاثر غلط ہے سن اسکرین جلد کے لیے نقصان دہ ہے یا یہ جلد کے کینسر کا سبب بنتا ہے بلکہ سچ یہ ہے کہ یہ ان بیماریوں سے آپ کو دور رکھتا ہے۔

٭ سن اسکرین کو اپنی گردن، ہاتھوں اور جلد کی ہر اس جگہ پر لگائیں جہاں دھوپ پڑ سکتی ہے۔

hand-care-tips-in-summer-in-urdu.jpg

٭ بعض خواتین یا نوجوان لڑکیوں کے چہرے پر چھائیاں سی پڑ جاتی ہیں۔ جگر کی گرمی بھی اس کا باعث ہو سکتی ہے۔ جگر کی گرمی دور کرنے کے لیے دس گیارہ دانے عناب لے لیں اور رات کو کسی مٹی کے پیالے میں بھگو دیں۔ صبح نہار منہ ان دانوں کو مسل کر موٹی ململ کے کپڑے سے چھان کر شکر ملا کر پی لیں۔ اکیس بائیس دنوں بعد نتائج سامنے آنے شروع ہو جائیں گے۔ اس کے ساتھ ساتھ زیادہ چکنائی اور گرم تاثیر کی چیزوں بالخصوص گڑ، تیل، بینگن، مسور کی دال وغیرہ سے گریز کریں۔

Skin Care.jpg

مہاسوں والی جلد کے لیے مندرجہ ذیل اُبٹن لگائیں

بیسن، سنگترے کے چھلکے اور اراروٹ کا آٹا۔ یہ تینوں چیزیں ہم وزن لے کر پیس لیں اور اسے پانی میں گھول کر چہرے پر لگائیں۔ رات کے وقت کیلوں اور کیلا مائنب لوشن استعمال کریں۔ اگر مہاسے زیادہ ہوں تو ویلو اسمتھ لوشن لگا کر سو جائیں۔ یہ لوشن چہرے سے دانوں کو ختم کرتا ہے۔ اگر مہاسوں میں سے سفید مادہ اور خون بھی نکلتا ہو تو دن میں تین مرتبہ صابن سے منہ دھوئیں۔ منہ دھونے کے بعد دانوں پر برکلے ماتین لوشن لگائیں اور رات کو چہرے کو صاف کر کے کریکٹو کریم دانوں پر لگائیں۔ اس سے کیل اور دانے ختم ہو جائیں گے اور چہرے پر شادابی آئے گی۔

داغ دھبوں، مہاسوں اور دانوں سے پاک صاف ستھرا چہرہ میک اپ کے بغیر بھی اچھا لگتا ہے اور میک اپ کے بعد بھی دلکش نظر آتا ہے۔ کون چاہتا ہے کہ اس کے چہرے پر داغ دھبے ہوں مگر یہاں چاہنے یا نہ چاہنے کا مسئلہ نہیں، پر داغ دھبے تو خود بخود جلد پر نمودار ہو کر بدصورتی کا باعث بن جاتے ہیں لیکن ان مہاسوں کو اپنی زندگی کوا لمیہ تصور نہیں کرنا چاہیے۔ یہ ہمیشہ رہنے والی چیز نہیں لہٰذا ان کے نکلنے پر افسردہ ہونے کے بجائے ان کے خاتمے کی تدابیر کرنی چاہئیں ۔